چین کے بعد بھارت میں بھی کورونا پھر سر اُٹھانے لگا

نئی دہلی: بھارت میں کورونا کی نئی شکل بی ایف.7 تیزی سے پھیل رہا ہے جس نے مودی سرکار کو فوری اور مؤثر اقدامات اُٹھانے پر مجبور کردیا ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق تیزی سے پھیلنے والے کورونا کی نئی شکل اومیکروں کا نیا سب ویریئنٹ BF.7 دراصل چین سے ملک میں آیا اور اب تک کئی کیسز سامنے آچکے ہیں۔

خیال رہے کہ چین میں کورونا کے نئے کیسز کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے اور رواں ہفتے کورونا سے دو اموات بھی ہوئی ہیں جس کے بعد کئی شہروں میں لاک ڈاؤن کو مزید سخت کردیا گیا۔

بھارت میں بھی کورونا کے اس نئے ویریئنٹ کے 131 کیسز سامنے آچکے ہیں اور اسپتال میں کورونا میں مبتلا مجموعی تعداد 3 ہزار سے زائد ہوگئی ہے۔

بھارت کی وزارت صحت نے دعویٰ کیا ہے کہ کورونا کے نئے ویریئنٹ سے متاثر ہونے والوں کی حالت خطرے سے باہر ہے اور ان میں زیادہ تر نے خود کو گھر میں قرنطینہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ دسمبر 2019 میں کورونا کا پہلا کیس چین میں سامنے آیا تھا جس نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا تھا اور امریکا کے بعد اس مہلک وائرس سے متاثر ہونے والا سب سے بڑا ملک بھارت تھا۔

ملک میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 2.81 فیصد تک پہنچ گئی

اسلام آباد: ملک بھر میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 2.81 فی صد تک پہنچ گئی جبکہ کورونا کے باعث دو افراد انتقال کر گئے۔

این آئی ایچ کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 406 افراد میں کورونا کی تشخیص ہوئی۔ انتہائی نگہداشت میں زیر علاج کورونا مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے، ملک بھر میں انتہائی نگہداشت میں زیر علاج کورونا کے مریضوں کی تعداد 94 پہنچ گئی۔

گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں کورونا کے 14 ہزار 496 ٹیسٹ کیے گئے۔ سندھ میں کورونا مثبت کیسز میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے، صوبے میں کورونا مثبت کیسز کی مجموعی شرح 7.64 فی صد پہنچ گئی۔

کراچی میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 21.71 فی صد ریکارڈ کی گئی جبکہ حیدرآباد میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 8.51 فی صد تک پہنچ گئی۔

مردان میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 8.77 فی صد، اسلام آباد میں 3.45 فی صد، لاہور میں 2.82 فی صد، پشاور میں 3 فی صد، راولپنڈی میں 1.64 فی صد جبکہ گجرات میں کورونا مثبت کیسز کی شرح 1.82 فی صد ریکارڈ کی گئی۔

کورونا کی نئی قسم، پاکستان کی مختلف ممالک پر سفری پابندیاں

اسلام آباد: این سی او سی نے کورونا کی نئی قسم او میکرون کے تناظر میں احتیاطی تدابیر اپنا تے ہوئے مختلف ممالک کو سی کیٹیگری میں ڈال دیا ہے۔

این سی او سی کا کہنا ہے کہ او میکرون کورونا جنوبی افریقا اور اس کے اطراف کے علاقوں میں تیزی سے پھیل رہا ہے، جس کے پیش نظر جنوبی افریقا، ہانگ کانگ، نمبیا اور بوٹسوانہ کے سفر پر پابندی عائد کردی ہے۔ ان ممالک میں سفر کے لیے صر ف ہنگامی صورتحال میں ہی اجازت ہو گی۔

ان ممالک سے آنے والے افراد کو مختلف پابندیوں سے گزرنا ہو گا، ٹیسٹ منفی آنے کے باوجود ان افراد کو تین دن قرنطینہ میں گزارنا ہوں گے، تین دن گزرنے کے بعد ان افراد کا کورونا ٹیسٹ لیا جائے گا۔ ٹیسٹ مثبت آنے پر مزید دس دن کا قرنطینہ کرنا ہو گا۔

این سی او سی نے سول ایوی ایشن، ائیر پورٹ انتظامیہ کو ہدایات جاری کردیں ہیں کہ وہ ان ممالک سے آنے والوں کے لیے اسکریننگ کا طریقہ کار بنائیں۔ ان ممالک سے آنے والے پاکستانیوں کو بھی ہیلتھ پروٹوکولز سے گزرنا ہوگا، تاہم پاکستانی نژاد افراد 5 دسمبر تک پابندی سے مستثنی ہو ں گے۔

کورونا کے نئے کیسز، چین میں شاپنگ مال سیل

بیجنگ: غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق چین میں کے دارالحکومت بیجنگ میں کورونا کے نئے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔ایک کورونا مریض نے بدھ کی شام بیجنگ کے ڈونگ چینگ ڈسٹرکٹ میں واقع شاپنگ مال کا دورہ کیا تھا جس کے بعد مال کوسیل کردیا گیا۔مال کے داخلی اورخارجی دروازوں کوبند کرکے اسٹاف اورکسٹمرزکوکورونا ٹیسٹ کے بغیرجانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ مال آج بھی بند رہے گا۔

بیجنگ کے چاررہائشی علاقوں، پرائمری اسکول اورایک آفس کمپاؤنڈ میں جمعرات کو لاک ڈاؤن نافذ کردیا گیا اورہزاروں رہائشیوں کوگھروں میں رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔ان علاقوں میں بڑے پیمانے پرٹیسٹنگ کا سلسلہ جاری ہے۔ چاؤیانگ اورہائیڈیان ڈسٹرکٹ میں کورونا کے چھ نئے کیسزکی تصدیق ہوئی ہے۔کورونا سے متاثرچارافراد کا تعلق ایک ہی خاندان سے ہے جبکہ دوافراد بزنس ٹرپ پربیجنگ آئے تھے۔

چین میں کورونا کی تازہ لہر کے بعد مختلف علاقوں میں لاک ڈاؤن نافذ کیا گیا ہے اوراندرون ملک سفری پابندیاں سخت کردی گئی ہیں۔متعدد پروازیں اورٹرین سروس معطل کردی گئی ہیں۔رواں سال کے اختتام تک چین میں اسی فیصد ویکسینیشن مکمل کرلی جائے گی۔

این سی او سی کا 8 شہروں میں پابندیاں نرم کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد: معاون خصوصی صحت ڈاکٹر فیصل کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے این سی او سی کے سربراہ وفاقی وزیر اسد عمر کا کہنا تھا کہ ویکسین کورونا سے نجات کا واحد حل ہے اور دنیا سمجھ چکی ہے کہ کورونا کا مقابلہ صرف ویکسین سےممکن ہے۔

این سی او سی اجلاس میں بھی ویکسین لگانے کے عمل کا جائزہ لیا گیا، جس کے بعد فیصلہ کیا گیا کہ 40 فیصد ویکسی نیشن والے شہروں میں پابندیاں نرم کی جائیں گی اور ان 8 شہروں کے علاوہ باقی شہروں میں پابندیاں 15 اکتوبر تک برقرار رہیں گی۔

سربراہ این سی او سی کا کہنا تھا کہ یکم اکتوبر سے اسکردو،پشاور،کوئٹہ،اسلام آباد،راولپنڈی سمیت8شہروں میں بندشیں کم کی جارہی ہیں، انشہروں میں انڈور اجتماعات میں 400 لوگوں کو شرکت کی اجازت ہوگی، اور آوٹ ڈور اجتماعات میں 1000 لوگ شریک ہو سکیں گے، وہاں شادی کی تقریبات روزانہ ہوسکیں گی، جب کہ وہاں کے مزارات، سنیما اور تمام ریسٹورنٹس مکمل طور پر کھولے جارہے ہیں، یکم اکتوبر سے ائر لائنز میں مسافروں کو کھانا بھی فراہم کیا جائے گا۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ بندشوں کا فیصلہ وبا کا پھیلاؤ دیکھ کر کیا جاتا ہے، یکم اکتوبر سے ویکسی نیشن کی بنیاد پر بندشیں لگیں گی، جو پابندیاں لگائی جارہی ہیں وہ ویکسین نہ لگوانے والوں کے لیے ہوں گی، یکم اکتوبر سے ہر شہر کی 40 فیصد آبادی کو ویکسین لگوانا لازمی ہے۔

کورونا ویکسین لازمی قرار دینے پر فیکٹری ملازمین کی مشکلات میں اضافہ

کراچی: سندھ حکومت کی جانب سے صنعتوں اور فیکٹریوں میں کام کرنے والے ورکرز کے لیے کورونا ویکسین کو لازمی قرار دیے جانے کے بعد مزدوروں اور نوکری پیشہ افراد کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا۔

ایکسپو سینٹر میں اتوار کو بھی ویکسین لگوانے کے لیے آنے والے شہریوں کی طویل قطاریں لگی رہیں، مزدور اور ورکرز ایک سے دوسرے ویکسین سینٹر کے درمیان گھومتے رہے، ورکرز نے تنگ آکر ایکسپو سینٹر میں قائم میگا ویکسین سینٹر کا رخ کرلیا تاہم انہیں یہاں بھی مایوسی کا سامنا کرنا پڑا۔

ایکسپو سینٹر میں ہفتہ کو بدنظمی کے واقع کے بعد پولیس کی نفری بڑھادی گئی لیکن نظم و ضبط بہتر نہ ہوسکا۔ قطاروں میں لگے افراد قطار آگے نہ بڑھنے اور قطاروں کے بغیر لوگوں کے اندر جانے پر تھوڑی تھوڑی دیر بعد شور مچاکر احتجاج کرتے رہے۔

صبح سویرے سے قطاروں میں لگے ورکرز کی شام تک بھی باری نہ آئی کچھ مزدور تو تھک ہار کر زمین پر ہی بیٹھ گئے جبکہ متعدد مزدوروں نے باری نہ آنے اور طویل قطاروں سے تنگ آکر گھروں کا رخ کرلیا۔

ورکرز کا کہنا تھا کہ مہینے کا اختتام ہے آئندہ ہفتہ تک تنخواہیں ملنا تھیں لیکن سندھ حکومت کی شرط کے باعث ان کی تنخواہیں خطرے میں پڑ گئی ہیں، آجروں نے صاف کہہ دیا ہے کہ ویکسین لگوا کر آؤ گے تو تنخواہ ملے گی۔

قطاروں میں لگے افراد نے کہا کہ صبح سے لائن میں لگے ہوئے ہیں لیکن باری نہیں آرہی جب کہ بااثر اور سفارشی افراد اہل خانہ کے ہمراہ قطاروں کے بغیر ہی ہال میں جارہے ہیں۔ انہوں نے سندھ حکومت پر زور دیا کہ نجی شعبہ میں فیکٹریوں اور صنعتوں میں ہی ویکسین لگائی جائے تاکہ مزدوروں کی مشکلات کم ہوسکیں۔

ایکسپو سینٹر کی قطاروں میں لگے شہریوں کا کہنا تھاکہ ایکسپو سینٹر میں کوئی سہولت نہیں نہ پینے کا پانی ہے نہ ہی پیٹ کی آگ بجھانے کا کوئی انتظام ہے، کئی گھنٹوں قطاروں میں لگ کر بھوکے پیاسے ویکسین لگانے جائیں تو بلڈ پریشر ویسے ہی اوپر یا نیچے ہوتا ہے جس سے ویکسین لگنے کے بعد حالت غیر ہونے کاخدشہ ہوتا ہے۔

قطاروں میں لگے بہت سے شہریوں نے آن لائن ڈیلیوری پر آرڈر دے کر کھانا منگوایا تاہم مہنگا کھانا خریدنے کی سکت نہ رکھنے والے افراد بھوکے پیاسے ہی قطاروں میں لگے رہے۔

ملک بھر میں کورونا کے وار تیز

اسلام آباد: ملک بھر میں کورونا وائرس کی چوتھی لہر تیزی سے پھیل رہی ہے 24 گھنٹوں کے دوران کورونا نے 86 افراد کو موت کے گھاٹ اتاردیا جب کہ مثبت کیسز کی شرح 7.79 فیصد سے بڑھ گئی ہے۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کی جانب سے جاری بیان کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک میں کورونا کی تشخیص کے لیے 58ہزار 203ٹیسٹ کیے گئے جن میں سے 4537 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی۔

ملک میں اب تک کورونا کے مصدقہ مثبت کیسز کی تعداد 1,024,861ہوگئی ہے جن میں سے 938,843مریض شفایاب ہو چکے ہیں۔ گزشتہ روز اس وبا نے مزید 86افراد کی زندگیوں کو نگل لیا۔ اس طرح ملک میں اب تک اس وبا سے جاں بحق افراد کی مجموعی تعداد 23 ہزار 295ہوگئی ہے۔ جب کہ مثبت کیسز کی شرح7.79فیصد ریکارڈ ہوئی ہے۔

مصطفیٰ قریشی کورونا وائرس کا شکار

کراچی: پاکستان کے معروف اور سینئر ترین اداکار مصطفیٰ قریشی بھی کورونا وائرس کا شکار ہوگئے۔

پاکستان فلم انڈسٹری کے سینئر ترین اداکار مصطفیٰ قریشی کا کورونا ٹیسٹ مثبت آیاہے اور انہوں نے خود کو قرنطینہ کرلیا ہے۔

خاندانی ذرائع کا کہنا ہے کہ 81 سالہ اداکار نے کورونا ٹیسٹ رپورٹ ملنے کے بعد اپنی اہلیہ روبینہ قریشی سے علیحدگی اختیار کرتے ہوئے خود کو آئسولیٹ کرلیا ہے۔

حکومت پاکستان کی شہریوں کو31 اگست تک کی ڈیڈ لائن

اسلام آباد: سربراہ این سی او سی اسد عمر کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے معاون خصوصی صحت ڈاکٹرفیصل سلطان کا کہنا تھا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں میں کورونا کیسزکی شرح میں اضافہ ہوا ہے، ملک بھرمیں کورونامثبت کیسزکی شرح7.5 فیصد ہے، تشویشناک مریضوں کی تعداد 3 ہزار سے تجاوز کرگئی ہے۔

معاون خصوصی کا کہنا تھا کہ کراچی سمیت بڑے شہروں میں دبائو بڑھ رہا ہے، بالخصوص کراچی میں کوروناکیسزمیں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے، کراچی میں 50 فیصد بیڈز پر کورونا مریض موجود ہیں۔
سربراہ این سی اوسی اسد عمر کا کہنا تھا کہ کئی لوگ اب بھی کورونا کو سنجیدہ نہیں سمجھ رہے، سندھ حکومت کورونا کے پھیلاؤ کوروکنے کیلئے اقدامات کو دیکھ رہی ہے، لیکن شہروں کو ہفتوں بند کرنا یا مکمل لاک ڈاؤن مسئلے کا حل نہیں ہے، مکمل لاک ڈاون کے بعد کورونا وبا بہت تیزی سے پھیلتی ہے۔

اسد عمر کا کہنا تھا کہ کوروناسےبچنےکاواحدحل صرف احتیاط ہے، ایس اوپیز پر عمل درآمد سے ہی کورونا کو کنٹرول کیا جاسکتاہے، سندھ اور بلوچستان میں ایس اوپیز پرعملدرآمد سب سے کم نظر آتا ہے، کورونا روکنے کے لئے سندھ حکومت سے ہر ممکن تعاون کریں گے، اگر وہ ایس او پیز پر عملدرآمد کے لئے فورسز کی مدد چاہتے ہیں تو ہم فوج سمیت تمام فورسز دینے کے لئے تیار ہیں۔

سربراہ این سی اوسی نے کہا کہ شہر بند کرنا اس وبا کا علاج نہیں، ویکسینیشن موجودہ حالات سے نکلنے کا واحد حل ہے، اور یہ خوش آئند بات ہے کہ لوگ ویکسینیشن کرارہے ہیں، گزشتہ روز ساڑھے آٹھ لاکھ سے زائد افراد کی ویکسینیشن ہوئی جو نیا ریکارڈ ہے، صرف پنجاب میں پانچ لاکھ سے زائد ویکسین لگائی گئی، اسی طرح دیگر صوبوں میں بھی ویکسینیشن میں خاطرخواہ اضافہ ہوا ہے، دس لاکھ ویکسی نیشن روزانہ کو کراس کرنا ہمارا ہدف ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ یکم اگست سے ہوائی سفر کرنے والوں کے لئے کورونا ویکسین لازمی قرار دے دی گئی ہے اور اس حوالے سے پہلے بتایا جاچکا ہے، لیکن اب 31 اگست تک 18 سال سے زائد عمر کے افراد کے لئے کورونا ویکسینیشن لازمی ہوگی، وہ اساتذہ جنہوں نے کورونا ویکسین نہیں لگوائی وہ 31 جولائی تک ویکسینیشن کرالیں ورنہ اسے کے بعد وہ اسکولوں میں نہیں جا سکیں گے، کیوں کہ ہم بچوں کی صحت خطرے میں نہیں ڈال سکتے۔

سربراہ این سی او سی نے بتایا کہ 31 اگست سے ڈرائیور ہیلپر، اسٹاف بسس چلانے والے وہ افراد جنہوں نے ویکسینیشن نہیں کرائی انہیں کام کرنے کی اجازت نہیں ہوگی، پبلک سیکٹرز اور دفاتر میں جانے والے، میرج ہال، ہوٹل میں کام کرنے والے، بسز، ٹرین، کوسٹرز چلانے والے اور ان کا عملہ، چائے خانے، بینکس نادرا آفس، مارکیٹس اور دکانوں میں کام کرنے والوں کے لئے بھی 31 اگست آخری تاریخ ہے۔

مریم نواز کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا

لاہور: پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز شریف کا کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا۔

ن لیگ کی ترجمان مریم اورنگزیب نے ٹوئٹ کرتے ہوئے بتایا کہ مریم نواز شریف کا کورونا ٹیسٹ پازیٹو آیا ہے، جس کی وجہ سے انہوں نے خود کو قرنطینہ کرلیا ہے۔ مریم اورنگزیب نے مریم نواز سمیت تمام مریضوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی اپیل بھی کی۔

مریم نواز نے اپریل میں بھی کورونا ٹیسٹ کرایا تھا جس کی رپورٹ منفی آئی تھی۔ حال ہی میں مریم نواز نے آزاد کشمیر اسمبلی کی الیکشن مہم بھرپور طریقے سے چلائی ہے اور جلسے جلوسوں میں حصہ لیا ہے۔