صدر ٹرمپ کی بھارت میں کھڑے ہو کر مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش

نئی دہلی: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وزیراعظم مودی سے ملاقات کے دوران پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک بار پھر مسئلہ کشمیر پر ثالثی کا کردار ادا کرنے کی پیشکش کی ہے۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دورہ بھارت کے آخری روز پریس کانفرنس میں کہا کہ وزیر اعظم مودی سے ہونے والی ملاقات میں دہشت گردی سمیت کئی معاملات پر سیر حاصل گفتگو ہوئی ہے جس میں مسئلہ کشمیر کو ترجیح حاصل رہی۔

یہ بھی پڑھیں:   مقبوضہ کشمیر میں جبر کے 103 روز، امریکہ نے بھارت کو کیاحکم دیا ؟

صدر ٹرمپ نے مزید کہا کہ امریکا کے پاکستان کیساتھ اچھے تعلقات استوار ہیں اور وزیراعظم عمران خان میرے دوست ہیں اس لیے اگر مسئلہ کشمیر کے حل کیلیے میں کچھ کرسکتا ہوں تو ثالثی کا کردار ادا کرنے کو تیار ہوں۔

اس موقع پر امریکی صدر کا یہ بھی کہنا تھا کہ بھارتی وزیر اعظم مودی سے بھی امریکا کے تعلقات اچھے ہیں اس لیے میں سمجھتا ہوں کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان کشمیر کے مسئلے کے حل کیلیے کردار ادا کرسکتا ہوں۔

یہ بھی پڑھیں:   طالبان نے 421 اضلاع میں سے ایک تہائی کا کنٹرول سنبھال لیا

واضح رہے کہ یہ پہلی مرتبہ نہیں جب امریکی صدر نے مسئلہ کشمیر کے لیے ثالثی کی پیشکش کی ہو اس سے قبل وزیراعظم عمران خان کیساتھ پریس کانفرنس میں بھی وہ اس خواہش کا اظہار کرچکے ہیں جب کہ ایک مرتبہ بھارتہ وزیراعظم کے سامنے بھی پیشکش رکھ چکے ہیں تاہم ہٹ دھرمی پر قائم مودی سرکار نے مثبت جواب نہیں دیا تھا۔