رمضان المبارک میں ان عادات و کاموں سے دور رہیں گے تو مکمل صحت کے ساتھ اس ماہ مقدس کی برکات سے مستفید ہو سکیں گے. انتخاب ایم آر شاہد

جءماہ صیام بہت جلد ہم پر سایہ فگن ہو نے والا ہے۔ یہ مقدس مہینہ اپنے ساتھ ایک طرف تو بے پناہ رحمتیں اور برکتیں لاتا ہے۔ اور دوسری طرف ہماری جسمانی اور روحانی تربیت بھی کرتا ہے۔اس بابرکت مہینہ میں کھانے پینے اور سونے جاگنے کی کچھ ایسی عادات بھی ہیں جو اکثر لوگ ناسمجھی میں کر جاتے ہیں جو ہمارے لیے نقصان کا باعث بن سکتی ہیں لہذا آج ہم آپ کو ایسی ہی کچھ عادات سے آگاہ کر رہیے ہیں تاکہ آپ ان سے دور رہیں اور مکمل صحت کے ساتھ اس ماہ مقدس کی برکات سے مستفید ہو سکیں۔

سحری نہ کرنا.

جب آپ سحری چھوڑتے ہیں تو 24 گھنٹوں میں ایک ہی مرتبہ صحیح انداز سے کھانا کھاتے ہیں اور یہ ٹھیک نہیں کیوں کہ جب آپ اپنے جسم کو کھانا نہیں دیں گے تو آپ روز مرہ کے کام نہیں کر پائیں گے اور سارا دن گزارنا مشکل ہو جائے اور ساتھ ہی آپ کی جلد بھی مرجھا جائے گی ۔ اس لیے سحری ضرور کریں۔

افطار میں کولڈ ڈرنکس پینا.

پورے دن کے روزے کے بعد افطار پہلا کھانا ہوتا ہے اور اس دوران کولڈ ڈرنکس پینے سے تیزابیت پیدا ہو سکتی ہے۔ جو سینے میں جلن کا باعث بنے گی۔دوسرا چہرے پر جھریاں بھی پڑ سکتی ہیں، یہی وجہ ہے کہ افطار میں پانی یا لیموں پانی کا استعمال بہترین ہے۔

افطاری کے فوری بعد ورزش کرنا.

اگر ورزش کرنا آپ کا پسندیدہ مشغلہ ہے تو یہ جان لیں کہ رمضان میں ہمارے جسم کا نظام تبدیل ہوجاتا ہے اور افطار کے فوری بعد ورزش کرنے سے ہڈیوں میں تکلیف بھی ہوسکتی ہے۔ بہتر ہے کہ ورزش سحری سے قبل کیا کریں۔

رمضان میں نمک کا زیادہ استعمال.

رمضان میں نمک کا بہت زیادہ استعمال کیا جاتا ہے،اس سے جسم میں پانی کی کمی بھی ہوسکتی ہے اور پانی کی کمی کے باعث جلد خشک ہونے لگتی ہے۔ اس کے لیے کیلوں کا زیادہ سے زیادہ استعمال کریں تاکہ جسم میں سوڈیم سے زیادہ پوٹاشیئم بڑھے۔

افطاری اور سحری کے فوری بعد سونا.

صرف رمضان میں ہی نہیں بلکہ کسی بھی وقت کچھ کھانے کے فوری بعد سونا صحت کے لیے نقصان دہ ہے۔ رمضان میں یہ عادت اس لیے زیادہ نقصان دہ ثابت ہوسکتی ہے کیوں کہ ہمارے جسم کو کھانا بہت دیر بعد ملتا ہے۔ اس عادت سے وزن میں اضافہ اور دل کی بیماریوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔