میزائلوں کے تجربات میں ناکامی کے پیچھے امریکا کا ہاتھ، ایران نے امریکہ پر الزام عائد کردیا

تہران(این این آئی)ایران نے الزام عائد کیا ہے کہ تہران کی جانب سے میزائلوں کے تجربات میں ناکامی کے پیچھے امریکا کا ہاتھ ہے۔ امریکی حکومت ایک سازش کے تحت ایران کے میزائل پروگرام میں خرابی پیدا کرکے اسے نقصان پہنچانے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ایرانی پاسداران انقلاب کی فضائیہ کے سربراہ امیر علی حاجی زادہ نے ایک بیان میں اعتراف کیا کہ ایران کو اس کے میزائل پروگرام میں خرابیاں پیدا کرنے کی امریکی سازشوں کے حوالے سے ٹھوس معلومات حاصل ہوئی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   مسافر طیارہ ہائی جیک کرنے کی کوشش کرنے والے شخص کو ہلاک کردیا

ایرانی عہدیدار کی طرف سے یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری جانب خود ایرانی حکومتی حلقوں میں میزائل پروگرام کے حوالے سے اختلافات پائے جا رہے ہیں۔ حاجی زادہ کا کہنا تھا کہ ایران کے میزائل پروگرام میں فالٹ پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ یہ سب کچھ امریکا کررہا ہے تاکہ ایران کا میزائل پروگرام ناکامی سے دوچارہو۔

یہ بھی پڑھیں:   افغان حکومت کی طالبان سے مذاکرات کیلئے وفد بھیجنے کی تیاری

انہوں نے مزید کہا کہ ہم سمجھ گیے ہیں کہ گذشتہ چند برسوں کے دوران ہمارے میزائل پرورگرام کو کس کس نے کیسے کیسے طریقوں سے ناکام بنانے کی مذموم کوشش کی۔ اگر ہمیں بیرون ملک سے میزائلوں کے لیے کوئی پرزہ منگوانا پڑتا ہے تو امریکا اس میں رکاوٹیں ڈالتا ہے۔ امریکا کی اس سازش کا مقصد اور ہدف تہران کو میزائل ٹیکنالوجی سے محروم کرنا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   بھارت کا ایک اور مگ 21 طیارہ تباہ

حاجی زادہ کا کہنا تھا کہ دشمن نے پہلے ہمیں میزائل سازی سے روکا۔ اس کے بعد بیرون ملک سے پرزہ جات کی ترسیل پر پابندی لگائی گئی۔ پھر بیرون ملک سے بورڈ منگوانے پرپابندی عاید کی اور اب الیکٹرانک آلات ایران کو فراہم کرنے سے روک رہا ہے۔ ایران کے دشمنوں کی ان تمام سازشوں کے باوجود تہران اپنے دفاعی پروگرام پر کوئی سمجھوتا نہیں کرے گا۔