دنیا کا سب سے بڑا ڈائنوساردریافت

Spread the love

بیونس آئرس: سائنسدانوں کی ایک ٹیم نے ارجنٹینا کے دریائے نیوکوین کی وادی سے 9 کروڑ 80 لاکھ سال قدیم ڈائنوسار کی ہڈیاں دریافت کی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ شاید یہ دنیا کا سب سے بڑا ڈائنوسار تھا، لیکن ابھی یہ بات یقینی طور پر نہیں کہی جاسکتی کیونکہ اب تک اس بے نام ڈائنوسار کی صرف دُم کے رکازات (فوسلز) ہی ملے ہیں۔

واضح رہے کہ اس وقت دنیا کے سب سے بڑے ڈائنوسار کا اعزاز ’’پیٹاگوٹائٹن مایورم‘‘ کے پاس ہے جس کے رکازات (فوسلز) 2017 میں ارجنٹینا کے ایک اور علاقے سے دریافت کیے گئے تھے۔ دریائے نیوکوین کی وادی میں 2012ء سے رکازات کی تلاش جاری ہے اور اب تک یہاں سے بڑی جسامت والے قدیم و معدوم جانوروں کے کئی رکازات بھی دریافت ہوچکے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   امریکی خلائی ادارے ناسا کے خلائی روبوٹ کی مریخ پر کامیاب لینڈنگ

تحقیقی ٹیم کو یہاں سے ایک ڈائنوسار کی دیوقامت دُم کے رکازات ملے ہیں جنہیں دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ یہ لمبی گردن والا نبات خور (پودے اور پتّے کھانے والا) ڈائنوسار رہا ہوگا۔ اس قسم کے ڈائنوسار جنہیں مجموعی طور پر ’’ساروپوڈز‘‘ کہا جاتا ہے، جسامت میں بہت بڑے ہونے کے باوجود بے حد پرامن ہوا کرتے تھے۔

یہ بھی پڑھیں:   بیرونی پھیپھڑوں کی بدولت زیرِ آب تیرتے ہوئے آکسیجن خود بنائیے

نو دریافتہ ڈائنوسار کو فی الحال کوئی نام نہیں دیا گیا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ جب تک اس کے کولہے اور چند دوسرے اہم جسمانی حصوں کی ہڈیاں نہیں مل جاتیں، تب تک اس کی مکمل شناخت بھی ممکن نہیں اور نہ ہی یقینی طور پر اس کی مکمل جسامت کے بارے میں کچھ بتایا جاسکتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   بجلی محفوظ کرنے والا کپیسٹر تیار

البتہ دُم کی ہڈی کو مدنظر رکھتے ہوئے ماہرینِ رکازیات نے اندازہ لگایا ہے کہ اس ڈائنوسار کی جسامت ’’پیٹاگوٹائٹن‘‘ کے مقابلے میں بھی 20 فیصد زیادہ، یعنی تقریباً 145 فٹ رہی ہوگی۔