موٹر وے زیادتی کیس میں پولیس کی بدنیتی نظرآ رہی ہے: لاہور ہائیکورٹ

Spread the love

لاہور: چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ جسٹس قاسم خان کا کہنا ہے موٹر وے زیادتی کیس میں پولیس کی بدنیتی واضح طور پر نظر آ رہی ہے۔

لاہور ہائی کورٹ میں کمپیوٹرائز روزنامچہ تیار کرنے کیخلاف کیس کی سماعت میں چیف جسٹس قاسم خان نے ریمارکس دیے کہ پورے پنجاب میں پولیس گردی کی انتہا ہو چکی ہے۔

موٹر وے زیادتی کیس کا حوالہ دیتے ہوئے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ نے کہا کہ مرکزی ملزم عابد ملہی کا باپ چیخ چیخ کر کہہ رہا ہے کہ عابد کو خود پولیس کے حوالے کیا، عابد ملہی کا باپ کہتا ہے کہ پولیس اہلکار چھت پر سوئے ہوئے تھے اور پولیس کی تفتیشی ٹیم میں انعام بانٹنے کے اعلانات کیے جا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   صحافی کے سوال پرجے یو آئی کے رکن قومی اسمبلی صلاح الدین کا حیرت انگیز ردعمل،بڑی پیشکش کردی

جسٹس قاسم خان نے کہا کہ 20، 20 دن تک لوگوں کی فیملیز کو غیر قانونی حراست میں رکھا جاتا ہے، پولیس کی بدنیتی واضح نظر آ رہی ہے۔ کیا ایس او پیز بنانے سے پولیس رولز ختم ہو گئے؟ ترقی یافتہ ممالک میں بھی ہارڈ کاپی کا سسٹم ختم نہیں ہوا، کیا کمپیوٹرائزڈ سسٹم اس لیے کیا گیا کہ پولیس افسران اپنی من مانیاں کر سکیں؟

یہ بھی پڑھیں:   ملکی معیشت 8 سال کی بدترین سطح پر پہنچ گئی

لاہور ہائی کورٹ نے کمپیوٹرائزڈ سسٹم کے تحت روزنامچہ لکھنے کی قانونی ترمیم کالعدم قرار دیتے ہوئے پورے پنجاب میں رات ساڑھے 11 بجے کے بعد ہاتھ سے رومنامچہ لکھنے کے احکامات جاری کر دیے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ تحریری آرڈر کا انتظار نہ کریں، ساڑھے گیارہ بجے کے بعد عدالتی حکم پر عمل کیا جائے۔

یہ بھی پڑھیں:   امریکا طالبان معاہدے سے بین الافغان مذاکرات کی راہ ہموارہوگی، شاہ محمودقریشی