دیوار پر ٹیپ سے چپکا ہوا کیلا ایک لاکھ 20 ہزار ڈالر میں فروخت

Spread the love

میامی: کسی دیوار پر بھدی سی ٹیپ سے چپکے ہوئے ایک کیلے کی قیمت کیا ہوسکتی ہے؟ یہ جان کر آپ دانتوں تلے انگلی دبانے پر مجبور ہوجائیں گے۔

یقیناً آپ اس ایک کیلے کے عوض چند روپے ہی ادا کریں گے لیکن ایسا ہی ایک کیلا میامی کی آرٹ بیسل نامی گیلری میں ایک لاکھ 20 ہزار ڈالر میں فروخت ہوا ہے جس کی پاکستانی روپوں میں رقم ایک کروڑ 80 لاکھ کے برابر ہے! اس کے بعد دوسرا کیلا بھی اتنی ہی رقم میں فروخت ہوگیا۔

یہ بھی پڑھیں:   کتے کا ڈرون کے ساتھ گشت

اسے اطالوی فنکار موریزیو کیٹلان نے بنایا تھا اس فن پارے کو ’کامیڈین‘ کا نام دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایک جانب تو کیلا عالمی طور پر تجارت کا حصہ ہے اور ہماری روزمرہ زندگی میں شامل ہے اور کیلے کے چھلکے سے پھسلنے جیسے لطائف بھی ہمارے معاشرے میں عام ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   سعودی عرب ، حائل میں 1000 سال قبل مسیح کے آثار قدیمہ کا انکشاف

موریزیو پہلے کانسی اور دیگر دھاتوں سے کیلا بنانا چاہتے تھے لیکن اس میں کامیابی نہیں ملی اور اس کے بعد انہوں نے ایک دکان سے تین کیلے خریدے اور انہیں آرٹ گیلری میں ٹیپ سے چپکادیا۔ ایک کیلا ایک خاتون نے ایک کروڑ 80 لاکھ روپے میں خریدا اور دوسرا ایک مرد نے اتنی ہی قیمت میں خرید لیا۔ لیکن توقع ہے کہ تیسرا کیلا اس سے بھی مہنگا فروخت ہوگا جس کی قیمت ڈیڑھ لاکھ ڈالر رکھی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   بھوتوں کی وہ 7 اقسام جو پاکستان میں پائی جاتی ہیں

آرٹ گیلری کے مطابق موریزیو کیٹلان اپنے ہمراہ کیلا رکھتے ہیں اور اسے ہوٹل کی دیوار پر لٹکائے رکھتے ہیں تاکہ وہ اس سے مثبت طور پر متاثر ہوسکیں۔ فن اور آرٹ کے ناقدین کے مطابق یہ فن پارہ اس وجہ سے انتہائی مہنگے داموں فروخت ہوا ہے کیونکہ موریزیو خود ایک بہت بڑے اور مشہور فن کار ہیں۔