جلد کی خارش کی وجہ صرف الرجی نہیں ذہنی مرض بھی ہوسکتا ہے، تحقیق

سویڈن: طبی ماہرین نے ایک تحقیق میں انکشاف کیا ہے کہ جلد کی خارش کی وجہ کسی چیز سے الرجی ہوجانا یا ایگزیما جیسی بیماری ہی نہیں بلکہ اس کی ایک وجہ ذہنی مرض بھی ہوسکتا ہے جس کا علاج کیے بغیر خارش سے نجات ناممکن ہے۔

سائنسی جریدے ’جرنل آف انویسٹی گیٹیو ڈرماٹولوجی ‘ میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ جلد کی خارش کی وجوہات میں الرجی، ایگزیما یا psoriasis کا ہونا ضروری نہیں بلکہ اس خارش کی وجہ وہ مرض بھی ہوسکتا ہے جس کی جانب سے آپ کا ’ذہن‘ بھی نہ جائے۔

یہ بھی پڑھیں:   اہلِ خانہ سے کشیدہ تعلقات سنگین امراض کی وجہ بن سکتے ہیں، تحقیق

سویڈن کی یونیورسٹی سے منسلک لیکچرار اور ماہر امراض جلد فلورینس جے ڈلگارڈ نے برطانیہ، فرانس، جرمنی، روس سمیت 13 یورپی ممالک کے مریضوں کا ڈیٹا جمع کیا جو مختلف جلدی امراض میں مبتلا تھے اور اس سروے میں مریضوں کے معاشی حالات اور ذہنی صحت سے متعلق بھی سوالات کیے گئے تھے۔

یہ بھی پڑھیں:   بجلی کے جھٹکوں سے کمر کے درد کا خاتمہ ممکن

محققین مریضوں کے ڈیٹا کی سہ ماہی کی بنیاد پر تجدید کرتے گئے، 3 برس بعد جلد کی خارش سے چھٹکارا حاصل کرنے والے مریضوں میں سے 56 فیصد ’اینٹی ہسٹامین‘ یعنی الرجی ختم کرنے والی دوا کے بغیر ہی صحت یاب ہوگئے۔ ان مریضوں کا خارش کے بجائے ڈپریشن اور اینگزائیٹی جیسی ذہنی امراض کا علاج کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   ماحولیاتی آلودگی کو نہ روکا گیا تو انسانیت کیلئے کتنا بڑا خطرہ ہے ؟

ڈاکٹر فلورینس کا کہنا ہے کہ تحقیق کے دوران حاصل ہونے والے اعداد شمار سے واضح ہوگیا کہ ان مریضوں کو جلد کھجانے کی وجہ سے ذہنی سکون ملتا تھا۔ اس طرز عمل نے ہمیں خارش کا ذہنی مرض سے تعلق ہونے کی جانب متوجہ کیا اورجیسے جیسے ہم نے مریضوں کا ڈپریشن اور اینگزائیٹی کم کیا ویسے ویسے بغیر اینٹی الرجی دیئے مرضوں میں جلد کی خارش بھی کم ہوتی گئی۔

کیٹاگری میں : صحت