بھارتی فضائیہ کی ناکام حکمت عملی پر بھارت نے فضائیہ کے سینئر افسر کو برطرف کر دیا

نئی دہلی(سی پی پی )پاک فضائیہ کی جانب سے بھارتی طیارے گرائے جانے اور بھارتی فضائیہ کی ناکام حکمت عملی پر بھارت نے فضائیہ کے سینئر افسر کو برطرف کر دیا۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارتی فضائیہ کی ناکام کارروائی،پاک فضائیہ کی جانب سے بھارتی طیاروں کی تباہی اور بھارتی پائلٹ کیگرفتاری پر ائیر مارشل سی ہری کمار کو عہدے سے برطرف کر کے ان کی جگہ ایسٹرن ائیرکمانڈ چیف ائیرمارشل رگوناتھ نمبیار کو بھارتی فضائیہ کے ویسٹرن ائیرکمانڈ کا نیا چیف مقرر کر دیا گیا ہے۔

ہر کمار کو جنوری 2017 میں بھارتی فضائیہ کے ویسٹرن ائیرکمانڈ کا نیا چیف مقرر کیا گیا تھا۔بھارتی حکام کا یہ فیصلہ بھارتی طیاروں کی پاکستانی حدود کی خلاف ورزی، پاک فضائیہ کی سرپرائز کارروائی اور اس کارروائی کے نتیجے میں بھارتی فضائیہ کے دو طیارے تباہ ہونے پر کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں:   پشاور میں فائرنگ سے ایک طالب علم جاں بحق، دوسرا زخمی

بھارتی حکام نے بھارتی فضائیہ کی ناکام حکمت عملی اور پاکستان میں بھارتی پائلٹ کی گرفتاری پر بھی شدید برہمی کا اظہار کیا۔بھارتی فضائیہ کے ویسٹرن ائیرکمانڈ کا ہیڈ کوارٹر دہلی میں موجود ہے جو بھارتی فضائیہ کی تقریبا چالیس فیصد ائیربیسز کو کور کرتا ہے۔ واضح رہے کہ پاک بھارت کشیدگی کے پیش نظر بدھ کی صبح پاکستان کے فضائی حدود کی خلاف ورزی کرنے والے دو بھارتی لڑاکا طیاروں کو پاک فوج نے مار گرایا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   عمران خان کی گیس بلوں میں اضافی رقم واپس کرنے کے لیے رقم مختص کرنے کی ہدایت

بھارت کے طیارے تباہ ہونے کے نتیجے میں جانی نقصان بھی ہوا جس کے بعد بھارت تلملا اٹھا۔پاک فضائیہ کی جاندار کارروائی میں تباہ ہونے والے بھارتی فضائیہ کے طیارے ایم آئی جی 21 تھے جو دراصل ایک سنگل انجن فلائنگ جیٹ ہے۔ایم آئی جی 21 کی قیمت جب 1959 میں اسے بنایا گیا تھا تب 2.9 ملین ڈالرز تھی ، جبکہ اب اس کی قیمت ڈھائی کروڑ ڈالرز عبور کر چکی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   جماعت الدعوۃ کے سربراہ حافظ سعید کے نماز کی امامت کرنے پر پابندی، پولیس نے مرکز کو بھی تالا لگا دیا

غور طلب بات یہ ہے کہ بھارت کو ان طیاروں کے تباہ ہونے سے 5 کروڑ ڈالرز سے زائد کا نقصان ہوا ہے لیکن اس کے باوجود بھارت کے پلے ذلت و رسوائی کے علاوہ کچھ نہیں آیا۔ پاکستان نے بھارت کے طیارے تباہ کیے اور ایک پائلٹ کو گرفتار کر لیا تھا جسے آج امن کے فروغ اور جذبہ خیر سگالی کے تحت واہگہ بارڈر کے راستے بھارتی حکام کے حوالے کیا جائے گا۔