نوجوت سدھو کی بھارتی حکومت پر تنقید، سوالات اٹھا دیئے

ممبئی(ویب ڈیسک)پلوامہ واقعے پر سابق بھاری کرکٹر و پنجاب کے وزیر نوجوت سنگھ سدھو نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کئی سوالات کھڑے کردیئے ۔

بھارتی پنجاب کے وزیر بلدیات و سابق کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو نے پلواما واقعےکے بعد کرتار پور بارڈر مسئلے کے لیے تشویش کا اظہار بھی کیا ہے ۔

سابق کرکٹر نوجوت سنگھ سدھو نے کہا کہ جب کوئی سیاست دان جاتا ہے تو شہر جام ہوجاتے ہیں۔ نوجوت سنگھ سدھو نے کہا کہ ہماری حفاظت کرنے والےجوانوں کی حفاظت کا خیال کیوں نہیں رکھا جاتا؟، جب تین ہزار جوان جاتے ہیں تو ٹریکر کیوں نہیں چلتا۔

یہ بھی پڑھیں:   امریکی صدارتی انتخابات، ہیلری نے پہلے مرحلے میں ہی ٹرمپ کو بڑی شکست دے ڈالی

سابق بھارتی کھلاڑی سدھو نے کہا کہ اس کا اثر حوصلہ شکنی کی صورت میں آتاہے۔ نوجوت سنگھ نے کہا کہ فوجی جوانوں کو صبح سویرے 3 بجے بذریعہ ہوائی جہاز کیوں نہیں لے جایا گیا۔ انہوں نے کہا کہسارا دیش ایک ہو کر لڑ رہا ہے لیکن کیا ان تین چار لوگوں کی وجہ سے کرتار پور پر سوالیہ نشان لگےگا؟۔

یہ بھی پڑھیں:   بھارت کی طرف سے مزید کارروائی کی دھمکیوں، بدلہ لینے اور جنگ کی گیدڑ بھبکیوں کا سلسلہ جاری، امریکی میڈیا کی شدید تنقید

نوجوت سنگھ سدھو نے کہا کہ وزرائے اعظم کے کیے گئے اقدامات پر سوالیہ نشان لگے گا۔انہوں نے کہا کہ نوجوت سنگھ سدھو بابانانک کے چرنوں کی دھول ہے۔ بھارتی پنجاب کے وزیر نے کہا کہ بابانانک کی فلاسفی پوری دنیا جانتی ہے، اسے کوئی ایک انچ بھی نیچا نہیں کرسکتا۔ سابق کرکٹر نے کہا کہ بابانانک کی فلاسفی کے لیے نوجوت سنگھ سدھو ٹھونک بجاکر کھڑاہوگا۔

یہ بھی پڑھیں:   امریکی ایلچی کی شام سے انخلاء پر ترک حکام سے بات چیت