”ورلڈ کپ 1999میں بنگلہ دیش سے پاکستان کی شکست مشکوک تھی “بڑا دعویٰ

Spread the love

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک )پی سی بی کے سابق سربراہ خالد محمود نے 1999کے ورلڈ کپ میں قومی کرکٹ ٹیم کی بنگلہ دیش سے شکست کو مشکوک قرار دے دیا ۔پاکستان کرکٹ ٹیم کو 31 مئی 1999 کو آئی سی سی ورلڈ کپ کے 29 ویں میچ میں حیران کن طور پر بنگلہ دیش کے ہاتھوں 62 رنز سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

نجی نیوز چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی کرکٹ میں میچ فکسنگ کے حوالے سے اس میچ پر بڑے سوالات اٹھتے رہے ہیں اور اب ایک بار پھر اس شکست پر بات کی ہے، پاکستان کرکٹ بورڈ کے سابق سربراہ خالد محمود نے، جنھیں 1999 کے ورلڈکپ فائنل میں لارڈز کے میدان میں آسٹریلیا کے ہاتھوں شکست کے بعد عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   دوسرا ٹی ٹوئنٹی؛ ہدف کے تعاقب میں آسٹریلیا کی بیٹنگ

نجی ٹی وی کے پروگرام میں خصوصی گفتگو کرتے ہوئے خالد محمود نے کہا کہ 1999کے ورلڈکپ سے قبل ہی کھلاڑیوں پر شکوک کا اظہار کیا جا رہا تھا اور سوالات اٹھانے والے کوئی اور نہیں اس ٹیم کے کوچ لیجنڈ جاوید میانداد تھے، جنھوں نے ورلڈ کپ سے چند دن پہلے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔خالد محمود نے 31 مئی 1999میں بنگلہ دیش کے خلاف قومی ٹیم کی شکست کو حیران کن قرار دیتے ہوئے بتایا کہ اس وقت وہ پاکستان میں تھے اور اس نتیجے پر خاصے پریشان بھی ہوئے کیونکہ ٹیم پاکستان میں اس وقت وسیم اکرم کپتان تھے۔اس ٹیم میں وقار یونس، انضمام الحق، سعید انور، معین خان، سلیم ملک، اظہر محمود اور شاہد آفریدی جیسے کرکٹرز کی موجودگی میں بنگلہ دیش کے ہاتھوں شکست پر خالد محمود کہتے ہیں کہ ‘مجھے اس شکست پر بہت غصہ بھی آیا کیونکہ یہ ایک انوکھا قسم کا میچ تھا۔

یہ بھی پڑھیں:   ملتان سلطانز کو 7رنز سے شکست،کراچی کنگزنے میدان مار لیا