جنوبی پنجاب صوبہ، اہم فیصلہ متوقع، وفاقی وزیر خسرو بختیار اسلام آباد طلب

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)جنوبی پنجاب صوبہ، اہم فیصلہ متوقع، وفاقی وزیر خسرو بختیار اسلام آباد طلب کر لئے گئے.مسلم لیگ (ن) کیجانب سے قومی اسمبلی میں جمع کرائی گئی آئینی ترمیم میں کہا گیا تھا کہ جنوبی پنجاب صوبہ کی صوبائی اسمبلی کی کل نشستیں 80 ہونگی، جن میں سے 64 جنرل، 14 خواتین اور 2 غیر مسلموں کیلئے ہونگی، جمع کرائی گئی ترمیم میں کہا گیا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 154 میں ترمیم کی جائے اور آئین کے آرٹیکل 1 میں ترمیم سے بہاولپور، جنوبی پنجاب کے صوبوں کی تشکیل کے الفاظ شامل کئے جائیں۔
وزیراعظم عمران خان نے جنوبی پنجاب صوبے کے حوالے سے وفاقی وزیر پلاننگ خسرو بختیار کو فون کرکے اسلام آباد طلب کرلیا ہے، خسرو بختیار اپنے حلقے کے دورے پر تھے اور ان کا حلقہ میں ایک ہفتے تک رہنے کا ارادہ تھا، واضح رہے کہ اس سے قبل پاکستان مسلم لیگ (ن) نے قومی اسمبلی میں بہاولپور اور جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کے لئے آئینی ترمیمی بل جمع کرایا تھا۔ بل کے مطابق بہاولپور صوبہ موجودہ انتظامی ڈویژن پر مشتمل ہوگا، جبکہ جنوبی پنجاب صوبہ ڈیرہ غازی خان اور ملتان ڈویژنز پر مشتمل ہوگا، آئینی ترمیم احسن اقبال، رانا تنویر، رانا ثناء اللہ خان اور عبدالرحمن کانجو نے اپنے دستخطوں سے سیکرٹری قومی اسمبلی کے پاس جمع کرائی تھی، ترمیم میں بہاولپور صوبہ کی صوبائی اسمبلی میں نشستوں کی کل تعداد 39 جن میں 31 جنرل، 7 خواتین اور ایک غیر مسلم کی نشست ہوگی۔

یہ بھی پڑھیں:   اب پیپلز پارٹی کی قیادت بلاول کریں گے ،مصطفی نواز کھوکھر

مسلم لیگ (ن) کی جانب سے جمع کرائی گئی آئینی ترمیم میں کہا گیا تھا کہ جنوبی پنجاب صوبہ کی صوبائی اسمبلی کی کل نشستیں 80 ہوں گی، جن میں سے 64 جنرل، 14 خواتین اور 2 غیرمسلموں کے لئے ہوں گی، جمع کرائی گئی ترمیم میں کہا گیا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 154 میں ترمیم کی جائے اور آئین کے آرٹیکل 1 میں ترمیم سے بہاولپور، جنوبی پنجاب کے صوبوں کی تشکیل کے الفاظ شامل کئے جائیں، صوبوں کی تشکیل کے لئے آئینی ترمیم کا عنوان آئینی (ترمیمی) ایکٹ مجریہ 2019ء ہے، ترمیم کے بعد ڈیرہ غازی خان اور ملتان ڈویژنز صوبہ پنجاب کی حد سے نکل جائیں گے، نیشنل کمیشن برائے نئے صوبہ جات تشکیل دیا جائے، تاکہ حدود اور دیگر اُمور کا تعین ہوسکے اور آئین کے آرٹیکل 175 اے میں ترمیم کرکے سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کی پرنسپل سیٹس قائم کی جائیں، جبکہ بلوچستان اسمبلی کی نشستوں کی کل تعداد 65، خیبر پختونخوا کی 145 اور سندھ کی 168 ہوں گی

یہ بھی پڑھیں:   منی لانڈرنگ پر 10 سال قید،5 کروڑجرمانہ ہو گا،انسداد منی لانڈرنگ بل کل پارلیمنٹ میں پیش کیا جائیگا

Related