صدام حسین کی قصیدہ گوئی جُرم نہیں: عراقی جوڈیشل کونسل

دبئی(العربیہ ڈاٹ نیٹ)عراق کی سپریم جوڈیشل کونسل نے سابق مصلوب صدر صدام حسین کی تعریف کرنے اور ان کے حق میں قصیدہ گوئی کو جرم قرار دینے سے متعلق خبروں کی سختی سے تردید کی ہے۔

عراقی جوڈیشل کونسل کی جانب سے ایک وضاحتی بیان سامنے آیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ کونسل نے مصلوب صدر صدام حسین کی تعریف کرنے پر کسی شخص کی گرفتاری کا حکم نہیں دیا اورنہ ایسی کوئی گرفتاری عمل میں لائی گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   ڈیجیٹل میڈیا پر بھارتی فوج کا مورال گرا نے کی سازش، ہمارے جوان لڑائی کیلئے تیار ہیں، بھارتی آرمی چیف

خیال رہے کہ حال ہی میں عراق کے سوشل میڈیا پر ایک خبر وائرل ہوئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ ذی قار گورنری کے سیکیورٹی حکام نے ایک عوامی شاعر صلاح الحرباوی کو حراست میں لیا ہے۔ ان پر اپنی شاعری میں صدام حسین کی تعریف کرنے اور ان کی قصیدہ گوئی کا الزام عاید کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   صدر ڈونلڈ ٹرمپ جلد ملک میں قومی ایمرجنسی نافذ کرنے والے ہیں، مِچ میک کونیل

شہریوں‌ نے الحرباوی کی گرفتاری کی خبر پر سخت غم وغصے کا اظہار کیا ہے جس کے بعد سپریم جوڈیشل کونسل نے واضح‌ کیا ہے کہ صدام حسین کی تعریف کرنے کو جرم قرار دیا گیا اور نہ ہی ایسا کرنے پر کوئی سزا مقرر کیا ہے۔

جوڈیشل کونسل کا کہنا ہے کہ کونسل صدام حسین کی تعریف کوجرم قرار دینے کی مجاز نہیں تاہم یہ کام پارلیمنٹ کا ہے۔ اگر پارلیمنٹ اس حوالے سے کوئی قانون سازی کرتی ہے تو جوڈیشل کونسل اس پرعمل درآمد کی پابند ہو گی۔

یہ بھی پڑھیں:   بھارت کی طرف سے مزید کارروائی کی دھمکیوں، بدلہ لینے اور جنگ کی گیدڑ بھبکیوں کا سلسلہ جاری، امریکی میڈیا کی شدید تنقید

عراقی شہریوں کا کہنا ہے کہ پارلیمنٹ نے صدام حسین کی ‘البعث’ پارٹی پر پابندی عاید کر رکھی ہے اور ان کی جماعت کی حمایت کرنے والوں کو گرفتار کرکے جیلوں میں ڈالا جا رہا ہے۔

Related