چیف جسٹس آف پاکستان آصف سعید کھوسہ کے بارے میں چند حقائق

لاہور (ویب ڈیسک) نئے چیف جسٹس آف پاکستان آصف سعید کھوسہ کے بارے میں یہ بات مشہور ہے کہ وہ مقدمات کی سماعت ملتوی کرنے کو سخت ناپسند کرتے ہیں ۔ ایک ساتھی جج سردار شمیم خان کے بقول مقدمے کو غیر ضروری طور پر ملتوی کرنا جسٹس آصف سعید خان کھوسہ کی ڈکشنری میں ہی نہیں ہے۔ نامور صحافی عباد الحق بی بی سی کے لیے اپنی ایک رپورٹ میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔ جسٹس آصف سعید کھوسہ اکثر کہتے ہیں کہ مقدمے کو ملتوی کرنے کی دو صورتیں ہوسکتی ہیں: ’یا وکیل صاحب فوت ہوجائیں یا پھر جج صاحب اللہ کو پیارے ہوجائیں! اس کے علاوہ کسی مقدمے کو التوا دینے کی کوئی تک نہیں بنتی ۔ نئے چیف جسٹس آف پاکستان صرف ایک سینئر جج اور ماہر قانون ہی نہیں اچھا خاصا ادبی ذوق بھی رکھتے ہیں اور ان کے اس ذوق کی جھلک ان کے عدالتی فیصلوں میں بھی نظر آتی ہے۔ انھوں نے ہی نواز شریف کے خلاف مقدمے میں ماریو پوزو کی مشہور کتاب ’گاڈ فادر‘ کا حوالہ دیا تھا۔ عدالتی فیصلے میں ان حوالوں کا سیاسی اور قانونی حلقوں میں خوب چرچا رہا۔چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ سپریم کورٹ کے ان دونوں بنچز کا حصہ بھی رہے جنھوں نے یوسف رضا گیلانی اور نوازشریف کے خلاف مقدمات کی سماعت کی اور انھیں بھی نااہل قرار دیا۔ 64 سالہ جسٹس آصف سعید کھوسہ سابق وزیراعظم نواز شریف کے دوسرے دورِ حکومت میں 22 مئی 1998 کو لاہور ہائی کورٹ کے جج بنے تھے ۔ یاد رہے کہ نئے چیف جسٹس پاکستان جسٹس آصف سعید کھوسہ سابق چیف جسٹس سپریم کورٹ جسٹس نسیم حسن شاہ کے داماد، سابق چیف سیکرٹری پنجاب ناصر کھوسہ اور سابق ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے طارق کھوسہ کے بھائی ہیں۔ سابق چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس نسیم حسن شاہ نے اپنی سوانح حیات میں اپنے داماد اور نئے چیف جسٹس پاکستان کا تذکرہ کیا۔ وہ لکھتے ہیں جسٹس آصف سعید کھوسہ کے ورفقا کار ان کا ’ایک دانشور جج‘ کی حیثیت سے احترام کرتے ہیں۔ جسٹس کھوسہ چند کتابوں کے مصنف بھی ہیں ان میں قانون کے حوالے سے چار کتابیں ’ہیڈنگ دی کانسیٹیٹوشن‘، ’کانسیٹیٹوشنل ایپولوگس‘، ’بریکنگ نیو گراونڈ‘ اور ’ججنگ ود پیشن‘ شامل ہیں۔ اس کے علاوہ انھوں نے آئین پاکستان کے بارے میں بھی کتاب لکھی۔ ڈیرہ غازی خان سے تعلق رکھنے والے جسٹس آصف سعید کھوسہ پاکستان کے دوسرے چیف جسٹس ہیں جن کا تعلق جنوبی پنجاب سے ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ نئے چیف جسٹس پاکستان آصف سعید کھوسہ 20 دسمبر 2019 کو 65 برس کے ہونے پر اپنے عہدے سے ریٹائر ہو جائیں گے۔یاد رہے کہ جسٹس ثاقب نثار کے بعد جسٹس آصف سعید کھوسہ نے آج سپریم کورٹ کے نئے چیف جسٹس کے طور پر اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے

یہ بھی پڑھیں:   ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کیخلاف تحریک عدم اعتماد جمع کرادی گئی

Related

اپنا تبصرہ بھیجیں